29

دیوریا:زمینی تنازع میں 6کے قتل کے معاملے میں14 حراست میں

دیوریا: اترپردیش کے ضلع دیوریا کے رودرپور علاقے میں پیر کی صبح زمینی تنازع میں چھ لوگوں کے قتل کے معاملے میں پولیس 14افراد کو حراست میں لے کر پوچھ گچھ کررہی ہے۔
چیف سکریٹری سنجے پرساد اور اے ڈی جی پی نے فتے پور کے لہڑا ٹولہ میں میڈیا نمائندوں کو بتایا کہ حکومت کی ہدایت پر واقعہ کی جانکاری کے لئے لکھنؤ سے آئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اس معاملے میں 14افراد کو حراست میں لے کر پوچھ گچھ کی جارہی ہے۔
دونوں افسران نے مشترکہ طور سے بتایا کہ یہ بہت ہی تکلیف دہ واقعہ ہے۔ ایک فریق کا تقریبا پورا کنبہ ختم ہوگیا اور دوسرے فریق کے کنبے کے رکن کا قتل کرنے کے بعد پریوار کے لوگ نہیں ہیں۔ اس معاملے میں تحریر لے کر مقدمہ درج کیا جائے گا۔
چیف سکریٹری پرساد نے بتایا کہ یہ واقعہ ایک پرانی رنجش کو لے کر ہوا ہے۔ ایسا دعوی کیا جارہا ہے ۔ جس میں ستیہ پرکاش دوبے کے بھائی گیان پرکاش دوبے نے اپنا کھیت ٹولے کے رہنے والے ایک شخص کو بیعنامہ کردیا تھا۔ جس سے ستیہ پرکاش دوبے کو لگتا تھا کہ اس کے بھائی کو بہلا پھسلا کر اس سے بیعنامہ کرایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ معاملے کی جانچ کی جارہی ہے اور اس پر سخت کاروائی کی جائے گی۔
قابل ذکر ہے کہ پیر کو دیورا کے رودرپور علاقے میں پیر کی صبح زمینی تنازع میں چھ افراد کا قتل کردیا گیاجبکہ ایک شدید طور سے زخمی ہوگیا۔
صدر سرکل افسر شریس ترپاٹھی نے یہاں بتایا کہ علاقے کے گرام فتح پور میں دو فریقین میں زمینی تنازع کو سلسلے میں چھ افراد کا قتل کردیاگیا۔ اس پرتشدد جھڑپ میں ایک لڑکی شدید طور سے زخمی ہے۔ جس کو بہتر علاج کے لئے ڈاکٹروں نے گورکھپور میڈیکل کالج ریفر کردیاہے۔
انہوں نے بتایا کہ فتے پور گاؤں باشندہ سابق ضلع پنچایت رکن پریم یادو کا گاؤں کے ہی ستیہ پرکاش دوبے کے کنبے سے زمینی تنازع چل رہا تھا۔ آج علی ال صبح پریم یادو(40) کی لاش گاؤں کے نزدیک ملنے سے ہلچل مچ گئی۔ قتل کے انتقال میں پریم یادو کے حامیوں نے ستیہ پرکاش دوبے کے گھر پر حملہ کردیا۔ اور ستیہ پرکاش، ان کی بیوی کرن دوبے، بیٹی سلونی، نندی اور بیٹے انمول کا قتل کردیا ۔
ترپاٹھی نے بتایا کہ موقع پر ڈی ایم اکھنڈپرتاپ سنگھ اور ایس پی سنکلپ شرما پہنچے ہے۔ واردات سے گاؤں میں کشیدگی ہے جس کو دیکھتے ہوئے احتیاط کے طور پر پی اے سی تعینات کی گئی ہے۔

کیٹاگری میں : state

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں