40

افریقی سیاحوں کی سکیورٹی میں اضافے کے لیے 2,300 سے زائد سیاحتی مانیٹر کیے جائیں گے تعینات

کیپ ٹاؤن، جنوبی افریقی ملک میں سیاحوں کی حفاظت میں اضافے کے لیے 2,300 سے زیادہ سیاحتی مانیٹروں کو تربیت اور تعینات کیا جارہاہے۔ وزیر سیاحت پیٹریشیا ڈی لِلے نے بدھ کو یہ اطلاع دی۔

ڈی لِلے نے یہ اعلان مشرقی کیپ صوبے میں 2023 کی سیاحتی موسم گرما کی مہم کے آغاز کے موقع پر کیا۔ وزیر نے کہا کہ ان کے محکمے کی توجہ کے بنیادی شعبوں میں سے ایک سیکورٹی کا مسئلہ ہے۔ کیونکہ یہ سیاحت کی تعداد کو بڑھانے کی کوشش کرتا ہے۔ انہوں نے کہا ’’ہم عوام، گھریلو مسافروں اور مستقبل قریب میں ہمارے ملک کا دورہ کرنے کی منصوبہ بندی کرنے والوں کو واضح یقین دہانی کرانا چاہتے ہیں کہ ہم سب کے لیے حفاظت کو بڑھانے کے لیے بھرپور طریقے سے کوششیں کر رہے ہیں۔‘‘

وزیر نے کہا کہ سیکیورٹی کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے گرمی کے موسم کے آغاز سے قبل تمام صوبوں میں سیاحتی مقامات، ہوائی اڈوں اور نیشنل پارکس پر مانیٹر تعینات کیے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ مانیٹر کی ذمہ داریوں میں شناخت شدہ پرکشش مقامات پر گشت کرنا، سیاحت سے متعلق آگاہی کو فروغ دینا، سیاحوں کو ضروری معلومات فراہم کرنا اور کسی بھی مجرمانہ واقعے کی اطلاع فوری طور پر جنوبی افریقی پولیس سروس (ایس اے پی ایس) اور دیگر متعلقہ نافذ کرنے والے اداروں کو دینا شامل ہیں۔ وزیر نے کہا کہ ان کی تعیناتی اکتوبر کے آخر سے نومبر 2023 کے اوائل تک موسم گرما کے سیاحتی موسم کے مطابق طے کی گئی ہے۔

مسٹر ڈی لِلے نے کہا کہ سیاحت کی حفاظت کو بڑھانے کے لیے نجی شعبے کا ایک مضبوط قدم سیکورا نامی ایپ ہے، جسے جنوبی افریقہ کی ٹورازم بزنس کونسل نے لانچ کیا ہے۔ اس ایپ کے ذریعے مسافروں اور سیاحت کے فریقین کو فوری مدد فراہم کی جاتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ’’یہ تمام کثیر جہتی اقدامات اور تعاون ہمارے خوبصورت ملک میں آنے والے تمام سیاحوں کی حفاظت اور فلاح و بہبود کو یقینی بنانے کے لیے ہمارے غیر متزلزل عزم کی نشاندہی کرتے ہیں۔‘‘ جنوبی افریقہ کا شمار دنیا کے ان ممالک میں ہوتا ہے جہاں جرائم کی شرح سب سے زیادہ ہے، جو ملک کے سیاحت کے شعبے کے لیے ایک سنگین خطرہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں