35

یوکرین نے جنگ کے خاتمے کے لیے عالمی اتحاد پر زور دیا

کیف، یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں دنیا سے اپنے ملک کے خلاف روسی جارحیت کو ختم کرنے کے لیے متحد ہونے کی اپیل کی ہے۔
نیویارک میں ایک جذباتی تقریر میں، مسٹر زیلنسکی نے کہا کہ ماسکو کو “دنیا کو آخری جنگ کی طرف دھکیلنے” سے روکنا چاہیے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ روس نے خوراک سے لے کر توانائی تک ہر چیز کو ہتھیار بنا لیا ہے۔ انہوں نے دلیل دی کہ موسمیاتی تبدیلی جیسے دیگر مشترکہ چیلنجوں پر بات چیت کرنے سے پہلے ماسکو کو جنگ چھیڑنا بند کر دینی چاہیے۔
مسٹر زیلینسکی نے جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس میں شرکت کرنے والے عالمی رہنماؤں سے کہا کہ “یوکرین اس بات کو یقینی بنانے کی کوششوں میں مصروف ہے کہ دنیا کا کوئی بھی ملک روسی جارحیت کے بعد کسی ملک پر حملہ کرنے کی جرات نہ کرے۔” انہوں نے کہا کہ روسی ہتھیاروں کو کنٹرول کیا جائے۔ اس جنگ میں ملوث افراد کو سزا ملنی چاہیے۔
مسٹر زیلینسکی نے کہا کہ ڈی پورٹ کیے گئے افراد کو گھر واپس جانا چاہیے اور قابضین کو اپنی زمینوں پر واپس جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا، “ہمیں ایسا کرنے کے لیے متحد ہونا چاہیے اور ہم یہ کریں گے!”
انہوں نے ماسکو پر یوکرین کے بچوں کو اغوا کرکے ‘نسل کشی’ کرنے کا بھی الزام لگایا۔ مارچ میں، بین الاقوامی فوجداری عدالت (آئی سی سی) نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کے لیے یوکرین کے بچوں کو مبینہ طور پر غیر قانونی طور پر روس بھیجنے کے الزام میں گرفتاری کے وارنٹ جاری کیے تھے۔
ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کو روس کے اہم اتحادی کے طور پر دیکھا جاتا ہے، کیونکہ ان کے ملک نے روس کو جنگی ڈرون فراہم کیے ہیں۔ انہوں نے جنرل اسمبلی کو بتایا کہ “امریکہ نے یورپی ممالک کو کمزور کرنے کے لیے یوکرین میں تشدد کو ہوا دی ہے۔ بدقسمتی سے، یہ ایک طویل المدتی منصوبہ ہے۔”
دریں اثنا یوکرین کے صدر نے خبردار کیا ہے کہ یوکرین جنگ کی وجہ سے عالمی نظام خطرے میں پڑ گیا ہے، روسی صدر پیوٹن تیسری عالمی جنگ کی وجہ بن سکتے ہیں۔
امریکی میڈیا کو انٹرویو میں صدر زیلنسکی نے کہا کہ روسی صدر ولادیمیر پیوٹن امریکا اور یورپ میں عدم استحکام لانے کیلئے ایٹمی جنگ کے خطرے کو استعمال کریں گے۔ اپنا مقصد پانے کیلئے وہ ایٹمی جنگ کی دھمکی دیتے رہیں گے۔
انہوں نے کہا کہ روسی صدر امریکی استحکام میں کمی کا انتظار کر رہے ہیں اور وہ سمجھتے ہیں کہ ایسا امریکی صدارتی انتخاب کے دوران ہوگا۔
اقوام متحدہ جنرل اسمبلی اجلاس میں خطاب میں صدر زیلنسکی کا کہنا تھا کہ روس خوراک کی عالمی قلت کو ہتھیار بنانے کی کوشش کر رہا ہے۔ ہمیں متحد ہو کر روس کو شکست دینی چاہیے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں