17

صدر جمہوریہ نے ایمبولینس ڈرائیور عارف کے کنبے کو 2 لاکھ کا چیک بھیجا

نئی دہلی۔ صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند نے ایمبولینس ڈرائیور محمد عارف کے کنبے کو امداد کے طور پر 2 لاکھ روپئے کا چیک دیا ہے۔ محمد عارف آخری سانس تک کورونا مریضوں کی خدمت کرتے رہے، یہاں تک کہ انہوں نے اپنے فرض کی ادائیگی کے لئے اپنے گھر بھی جانا چھوڑ دیا تھا۔ طبیعت خراب ہونے سے ایک دن پہلے وہ اسپتال سے کورونا مریض کی لاش لے کر آئے تھے۔ اس کے اگلے ہی دن ان کی طبیعت خراب ہونے پر انہیں ہندوراو اسپتال میں بھرتی کرایا گیا تھا۔ بھرتی کرانے کے ایک دن بعد ہفتہ (10 اکتوبر) کو ان کی موت ہو گئی تھی۔
بتایا جاتا ہے کہ کورونا مریضوں کی خدمت کے لئے انہوں نے اپنے گھر بھی جانا چھوڑ دیا تھا۔ حالانکہ اس دوران کبھی کبھار جب وہ اپنے گھر جاتے تو گھر کے باہر سے ہی اپنے اہل خانہ کی خیریت دریافت کر کے وہ واپس اپنی ڈیوٹی پر لوٹ جاتے۔ پسماندگان میں ان کے دو بیٹے ہیں، جبکہ دو بیٹیوں کی شادی ہو چکی ہے۔ ان کی اہلیہ سلطانہ بیگم اپنے شوہر کی وفات سے صدمے میں ہیں۔
متوفی عارف کی اس بےلوث خدمت کے بارے میں جب صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند کو پتہ چلا تو انہوں نے مالی امداد کے طور پر فوری ضروریات کے لئے محمد عارف کی بیوہ کو دو لاکھ روپئے کی رقم دینے کا فیصلہ کیا۔ چنانچہ شاہدرہ کے ڈی ایم کے ہاتھوں محمد عارف کی بیوہ سلطانہ عارف کو دو لاکھ کے چیک کے ساتھ ایک تعریفی مکتوب بھجوایا گیا۔ مکتوب میں متوفی کی کورونا مریضوں کے تئیں بے لوث خدمات کے لئے ان کی ستائش کی گئی ہے۔
عارف گزشتہ تین دہائیوں سے شہید بھگت سنگھ سیوا دل سے بطور ڈرائیور منسلک تھے۔ وہ کنبے میں اکلوتے کمانے والے فرد تھے۔ ان کا کنبہ دہلی کے ویلکم ایل بلاک لوہا منڈی میں کرائے پر رہتا ہے۔ 22 گز کے مکان میں پہلی منزل کرائے پر لے رکھی ہے۔ اس کا ماہانہ کرایہ 9000 روپئے ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں