23

کورونا کیسز منظر عام پر آنے کے بعد پاکستان کی بڑی یونیورسٹی بند

اسلام آباد،پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں واقع پاکستان کی قائداعظم یونیورسٹی (کیو اےیو) کے متعدد طلباء کے کورونا سے متاثر ہونے کے بعد یونیورسٹی عارضی طور پر بند کردی گئی ہے۔ عہدیداروں نے یہ اطلاع منگل کو دی ہے۔
ضلعی صحت کے عہدیداروں نے پیر کے روز دیر سے جاری ایک نوٹس میں کہا ہے کہ یونیورسٹی انتظامیہ سے طلباء میں اس بیماری کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے معیاری طریقہ کار پر عمل کرنے کو کہا گیا ہے۔
ضلع صحت افسروں نے پیر کی دیر رات جاری کئے گئے ایکنوٹس میں کہا کہ یونیورسٹی انتظامیہ کو طلبہ میں بیماری کے پھیلاؤ کو روکنےکےلئے معیاری طریقوں پر عمل کرنے کو کہا گیا ہے۔
صحت افسروں نے طلبہ کے انفیکشن سے متعلق تین محکموں کو اگلے حکم تک بندکردیا ہے۔محکموں کو بند کرنے کےلئے پولیس کو بلایا گیا۔ جبکہ یونیورسٹی کے دیگر محکموں کو بھی ایک دن کے لئے بند کردیا گیا ہے۔بند کئے گئے محکموں کے طلبہ کو دو ہفتے کےلئے خود قرنطینہ میں رہنےکےلئے کہا گیا ہے۔
پاکستان نے 1967 میں یہ یونیورسٹی قائم کی۔ یہاں 13 ہزار سے زیادہ طلباء زیر تعلیم ہیں۔
یونیورسٹی فیس بک کے آفیشل پیج میں کہا گیا ہے کہ تمام بند محکموں کے لئے آن لائن کلاسز جاری رہیں گی ، جبکہ یونیورسٹی کو اگلے نوٹس تک معطل کردیا گیا ہے ۔
ستمبر میں دارالحکومت کی ضلعی انتظامیہ کی طرف سے 49 تعلیمی اداروں کو سیل کیا گیا تھا جہاں کورونا وائرس کے معاملوں کا پتہ چلا تھا۔
وزارت صحت نے پیر کے روز بتایا کہ ملک میں 328،602 افراد کورونا سے متاثر ہوئے ہیں ، ان میں سے 311،075 ٹھیک ہوچکے ہیں اور 6،739 افراد فوت ہوگئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں