24

فوج کے تمام اعلی کمانڈروں نے جنگ کی قومی یادگار میں شہدا کو خراج عقیدت پیش کیا

نئی دہلی،انفنٹری یعنی پیدل فوج کے یوم تاسیس کے موقع پر ، چیف آف ڈیفنس اسٹاف اور چیف آف آرمی اسٹاف اور فوج کے تمام اعلی کمانڈرز اور کرنل آف ریجیمنٹ نے آج یہاں جنگ کی قومی یادگار(نیشنل وار میموریل) میں شہدا کو خراج عقیدت پیش کیا۔
یہ پہلا موقع ہے جب انفنٹری ڈے کے موقع پر فوج کے تمام اعلی کمانڈروں اور ریجیمنٹوں نے مل کر قومی جنگ میموریل میں شہدا کو خراج عقیدت پیش کیا ہے۔
در حقیقت ، فوج کے اعلی کمانڈر اور ریجیمنٹ کے کرنل فوجی کمانڈروں کی کانفرنس میں شرکت کے لئے یہاں آئے ہیں۔ کانفرنس کا آغاز یہاں پیر کو ہوا۔ اتفاق سے آج کا 74 واں انفنٹری ڈے بھی ہے۔
فوج کے ترجمان نے یہاں بتایا کہ یہ پہلا موقع ہے جب تمام اعلی کمانڈروں اور ریجمنٹس کے کرنل نے اس موقع پر قومی وار میموریل میں شہدا کو خراج عقیدت پیش کیا ہے۔
اعلی کمانڈروں کے بعد سی ڈی ایس جنرل بپن راوت ، آرمی چیف جنرل منوج مکند نرونے اور ڈائریکٹر جنرل انفنٹری بھی جنگی یادگار گئے اور شہدا کو پھول چڑھائے۔
یہ بھی ایک اتفاق ہے کہ اس موقع پر جنگ میموریل میں ڈیوٹی پر13 کماؤں ریجیمنٹ ہے، جن کی بہادروں نے 1962 میں چینی فوج کے ساتھ انجمن کی جنگ انتہائی برے حالات میں لڑی تھی۔ میجر شیطان سنگھ ، جنہیں بعد از مرگ پرم ویر چکر سے نوازا گیا تھا،نے آخری دم اور آخری گولی تک اپنی ٹیم کے ساتھ ریجانگلا کی پہاڑیوں میں اپنی جان قربان کرتے ہوئے ایک تاریخی جنگ لڑی تھی۔
ریجانگلا کی پہاڑیاں وہی علاقہ ہیں جہاں پگونگ جھیل کے قریب گذشتہ ماہ ہندوستانی فوجیوں نے چوٹیوں پر اپنا قبضہ کیا ہوا ہے۔
ہر سال ستائیس اکتوبر کو انفنٹری ڈے کے طور پر منایا جاتا ہے کیونکہ اس دن دو سکھ ریجمنٹ اور 13 کماؤں انفنٹری کمپنیوں کو پاکستانی قبائلیوں اور پاکستانی فوج سے کشمیر آزاد کروانے کے لئے دہلی سے سری نگر لاجایا گیا تھا۔ اس دن کو کماؤں ریجمنٹ اور سکھ ریجمنٹ ڈے کے طور پر منایا جاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں